سگھڑ بمقابلہ پھوہڑ …..

کل ہم ایک دعوت میں مدعو تھے ۔۔۔ دعوت کا اہتمام گھر میں تھا اور مہمانوں کی تواضع کا انتظام ہوٹل کے ذمّے اس لیئے اہلِ خانہ لشکارے مارتے ڈریسز پہنے خوشی سے سرشار اِدھر اُدھر گھوم رہے تھے ۔۔۔۔ سب سے ملنے کے بعد میں نے آتے جاتے ہوئے لوگوں اور گھر پہ نظر ڈالی تو دل چاہا اسی وقت دو سطری بلاگ لکھ کے قلم توڑ دوں ۔۔۔۔
میزبان خواتین نے صرف خود پہ توجہ دی تھی ۔۔۔ گھر کی حالتِ زار بتا رہی تھی کہ اگر سارے مہمانوں کو لگاؤں تو بھی آج صفائی مکمل نہیں ہونی ۔۔۔ میری بک بک کا مقصد اتنا سا ہے کہ “ پھوہڑ خواتین “ کی قسمت اعلٰی ہوتی ہے ۔۔۔۔ ناز و انداز اور اداؤں سے آنکھوں پہ پٹی باندھی جا سکتی ہے ۔۔۔ پھر کچھ نظر نہیں آتا اداؤں کے ماروں کو 🙄
اس لیئے سُگھڑ بیبیو اب اصغری کے زمانے والے فیشن تو اِن ہوسکتے ہیں اصغری نہیں ۔۔۔۔ اب فیوی کول کے استعمال سے سیّاں کا دل بگاوت کرتا ہے یہ گھر میرا گلشن ہے کہہ کر نہیں ۔۔۔ چلو بھئی کبھی کام بھی کر لیا کرو تعریف کی آس میں پوری پوسٹ پڑھ لی ناں ویسے کیا خیال ہے بادل کے بغیر بجلیاں گِرانا اچھا ہے یا دیگچیاں چمکانا 😛

Advertisements

11 تبصرے »

  1. جل گیا؟؟؟؟

    برنال لگائیے۔۔ 😆

  2. ارے بیٹی ۔ جلدی سے توبہ کرو ۔ غُصہ پی جاؤ اور قلم توڑنے کا ارادہ دل سے ایسے نکال دو جیسے مکھن سے بال نکال کر حقارت سے پھینکا جاتا ہے ۔ جاپتا ہے کہ کسی جدید گھرانے میں پہلی بار گئی ہیں
    http://www.theajmals.com

  3. جل مت، تیرے جلووں کی لوڈشیڈنگ کی ایک بڑی وجہ یہی سڑن کے کالے بادل ہیں جو تیری آنکھوں کے سامنے چھائے رہتے ہیں
    پی ایس: شادی کی تصویریں تو میسج کر دے اگر کوئی کام کی "بجلی گھر” تھی تو

  4. hijabeshab Said:

    مجھے پتہ تھا سب نے یہی لکھنا کہ جل گئی میں جب کہ میں تو ” دُکھی ” ہوں 😦

    اجمل انکل وہ جدید گھرانہ نہیں میرے جیسے سفید پوش ہی ہیں لیکن بس ذرا نئے نئے امیر ہوئے ہیں 🙂

    ڈفر بجلی پوسٹ دوں آپ جل گئے تو ایک تبصرہ اور کم :پ

  5. نکتہ ور Said:

    صفائی کا ذوق پر کسی کو نہیں ملتا

  6. حِجاب یہ دُکھ صِرف آپ کا نہيں ميں بھی آپ کے اِس دُکھ ميں برابر کی شريک ہُوں اور بڑی بات تو يہ ہے کہ ميں تو بعض جگہ خُود گُھس کر صفائياں شُروع کر ديا کرتی تھی خير وُہ تو گُزرے زمانے کی باتيں ہيں اب ميں بہُت مُشکِل ميں پڑ کر نظر اندا ز کر ديا کرتی ہُوں گو بار بار نظر اُسی خرابی اور گندگی کی طرف ہی جاتی رہتی ہے ہاں اور اب خير سے ايک نيا رُجحان صل پڑا ہے کہ ہميں کام نہيں کرنا اچھا لگتا اور کھانا بنانے کا تو بِالکُل شوق نہيں ہے اور يہ بات بہُت فخر سے کہی جاتی ہے اور ميری حيرانگی ہی ختم ہونے کا نام نہيں ليتی کہ يہ کيا بات ہے اور حيرت اِس بات پر بھی ہے کہ ايسے کاٹھ کے اُلُو مِل بھی جاتے ہيں جِنہيں بس ليپا پوتی ہی درکار ہوتی ہے گھر کی نہيں سامنے والی کی گھر ميں بے شک مکھياں بِھنکتی رہيں يا جالوں کےجال لگے رہيں شايدزمانے کے انداز بدل گۓ ہيں ياہم پُرانے لوگ ابھی تک پُرانی قدروں سے چِمٹے ہُوۓ ہيں۔۔۔۔

  7. یعنی ایک آپ کو کھانا کھلانے کی غرض سے صدیوں تک پیسے جمع کرتی رھیں۔ اور پھر جواباً یہ بھی سُنیں کہ گھر کا حشر نشر تھا۔

    کوئی اچھی چیز بھی نظر آئی وہاں؟

  8. بعض لوگ تو صفائی کر بھی لیتے ہیں، لیکن پھر بھی گھر صاف نظر نہیں آتا کہ انکو صفائی کا ہنر تک معلوم نہیں ہوتا۔

  9. hijabeshab Said:

    شاہدہ آپی کافی عرصے کے بعد آپ کا تبصرہ دیکھ کر خوشی ہوئی 🙂 بلکل ٹھیک کہا آپ نے ہم پرانے اقدار سے جڑے ہوئے ہیں لیکن زمانے کے ساتھ بھی چلتے ہیں ہاں یہ الگ کہ کاٹھ کے الو کم پائے جاتے ہیں اور لیپا پوتی میں ہم صفر بٹا صفر 😦

    جوانی پٹا صاحب جی بلکل کھانا اچھا تھا خوش رنگ 🙂

    منصور مکرم ٹھیک کہا آپ نے نفاست نہیں نظر آتی صفائی میں ۔۔۔

  10. Sarwat AJ Said:

    ڈیئر حجاب، میرے خیال سے سُگھڑ خواتین کو کسی بات سے بھی اتنا نقصان نہیں پہنچتا جتنا کہ خُود اپنی پرفیکشنسٹ عادات سے- اور اِس پرفیکشن پہ کوئی تمغہ بھی نہیں ملتا ، بس آپ کا ذاتی خبط ہوتا ہے یہ- اور ایسی صورتِ حال میںجس قدر جلد اِس عادت پہ قابو پالیا جائے، اچھا ہے-
    پتہ نہیں کیوں مردوں کی نظروں میں بھی پھوہڑبد دماغ خواتین ہی جچتی ہیں-


{ RSS feed for comments on this post} · { TrackBack URI }

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: