انکھیوں ہی انکھیوں میں ۔۔۔

نگاہیں بولتی ہیں بےتحاشہ
محبت پاگلوں کی گفتگو ہے
محبت میں نگاہیں جو باتیں کرتی ہیں وہ محبوب کو ضرور سمجھ آتی ہونگی جبھی تو انکھیوں ہی انکھیوں میں بات چل کے وہاں تک جا پہنچتی ہے کہ ایک دوسرے کے بِن رہنے کا تصوّر بھی محال ہوتا ہے ، مگر محبت کے علاوہ جب نگاہوں سے کچھ کہنے کی کوشش کی جائے اور نگاہوں کو ٹھیک سے کہنا نہ آتا ہو تو بات ہوتی کچھ اور ہے سمجھ کچھ اور آتی ہے ۔۔۔
کسی محفل میں بیٹھے ہوں اور اچانک گردے پر کُہنی یا گُھٹنے پر زوردار ٹکر سے متوجہ کرکے آنکھوں سے اشارہ کیا جائے ۔۔ اُدھر دیکھو ۔۔۔۔۔ اُدھر دیکھنے پہ جب کچھ سمجھ نہ آئے ۔۔ اور دوسرا مسلسل مسکرا کے دیدے گُھما رہا ہو تو عجب گومگو کی سی کیفیت ہوتی ہے ۔۔۔ اور مسلسل اشارے دیکھنے والوں کو شک میں مبتلا کردیتے ہیں ۔۔۔
جسمانی حرکات ، آنکھ کے اشارے اور چہرے کے تاثرات سے بات سمجھانا یا اظہار کے فن میں ہر کوئی ماہر نہیں ہوتا ۔۔۔ میرے چہرے کے تاثرات اور آنکھ کے اشارے امّی سمجھ لیتی ہیں مگر میں امّی کے اشارے نہیں سمجھ پاتی ۔۔ ہر بات کے لیئے چہرے کا تاثر یا آنکھوں کی حرکت یکساں ہو تو بات سمجھ نہیں آتی ۔۔۔ آنکھوں کے اشارے سے ذرا سی گردن جھکا کے مسکراتے ہوئے سلام کیا جائے ، ہاتھ کے اشارے سے خیریت دریافت کی جائے یا ناگواری اور اکتاہٹ کے تاثرات میں سمجھ اور سمجھا دیتی ہوں ۔۔۔ لیکن اگر دو لوگ آپس میں آنکھوں ہی آنکھوں میں کسی کو دیکھتے ہوئے بات کریں تو سمجھنا مشکل ہوتا ہے اور نتیجہ شک ، بدگمانی ۔۔۔۔ اور مجھے دیکھ کر اگر ایسا کیا جائے تو جب تک تسلّی بخش جواب اُگلوا نہ لوں پیچھا نہیں چھوڑتی 😛
چہرے پڑھ کے تاثرات کا اندازہ لگانا مشکل نہیں ۔۔۔ مگر آنکھوں کے اشارے ۔۔۔۔۔۔۔۔ ٹریفک کے اشاروں سے زیادہ مشکل ۔۔۔۔ اس بات سے بھی انکار نہیں کہ کبھی کبھی ہزار الفاظ وہ کام نہیں کرسکتے جو ایک مسکراہٹ ، پُرجوش طریقے سے ہاتھ ملانا یا گلے ملنا کر جاتا ہے ۔۔۔۔ شرط صرف اتنی کے لب خاموش ، آنکھیں بات کرنا اور جسمانی حرکات اظہار کا فن جانتے ہوں ۔۔۔۔۔۔ میں تو اس فن میں مڈل پاس ہوں ۔۔۔۔ آپ سب کس کلاس میں ہیں ؟؟؟؟

19 تبصرے »

  1. Jafar Said:

    یعنی مڈل پاس کرگئی ہیں آپ اس مضمون میں؟
    رشک آتا ہے
    مجھے تو آنکھوں سے صرف ایک ہی اشارہ کرنا آتا ہے
    جس پر کوئی کچھ سمجھے نہ سمجھے
    تپ ضرور جاتا ہے۔۔۔

  2. حجاب۔۔۔ آنکھوں ہی آنکھوں میں بات کرنے کا مزا تب ہی ہوتا ہے جب محبوب اور محبوبہ کے مابین لمبی اور گہری گفت و شنید ہو رہی ہو۔۔۔ اور اگر دونوں پارٹیاں ہی نگاہیں اٹھنے اور جھکنے سے ہی ہر ہر بات سمجھ جائیں تو اندازہ لگایا جا سکتا ہے کہ فی الحال انڈرسٹینڈنگ بڑی اونچی ہواوں میں ہے۔۔۔

    دوسری قسم کے اشارہ بازی زیادہ تر چغلیوں کے لیے ہی استعمال ہوتی ہے۔۔۔ مثلا۔۔۔ اسے دیکھ، کیا کر رہا ہے۔۔۔۔۔۔؟

    ویسے آپ ایسے موضوعات ڈھونڈتی کہاں سے ہیں۔۔۔

  3. لگتا ہے کے آپ نے اشاروں اشاروں میں کچھ سمجانے کی کوشش کی ہے ۔ شکر ہے کہ سمجھ نہیں آئی ورنہ آپکو شاباش دینے کی ضرورت پڑ جاتی ۔

  4. آپ اس معاملے میں اگر مڈل پاس ہیں تو میں “نئی روشنی ” اسکول کا طالبعلم ہوں …🙂
    میرا خیال ہے کہ جب دو آدمیوں میں کسی معاملے پر ایک جیسی دلچسپی ہو یا ایک جیسے تحفظات ہوں تو ہی وہ آنکھوں کے اشارے سمجھتے ہیں ورنہ نہیں…چاہے وہ ایک دوسرے سے کتنے ہی قریب کیوں نہ ہوں …

  5. آپس میں آنکھوں کے اشاروں کو سمجھنے کا دعوی کرنے والے عموماً غلط بات سمجھتے ہیں۔ سمجھدار لوگ سیاق و سباق کو استعمال کرتے ہوئے بات کی تہہ تک پہنچتے ہیں۔ باقی شرمندگی چھپاتے رہتے ہیں۔

  6. مجھے آپ کے اشارے ٹریفک سگنل کی لال بٹّی کی طرح بالکل سمجھ نہیں آئے

  7. دوست Said:

    باڈی لینگوئج ایک فن ہے اور دوران گفتگو اس پر عبور آپ کی کمیونیکیشن کرنے کی صلاحیت کو چار چاند لگا دیتا ہے۔ لیکن یہ ہر کس و ناکس کے بس کی بات نہیں کہ صحیح اشارہ کرنے کے ساتھ ساتھ دوسرے کا اشارہ سمجھ بھی سکے۔
    محبت کے معاملے میں تو بات مختلف ہوتی ہے، برسوں کی انڈاسٹینڈنگ اور ایک دوسرے کا مزاج سمجھنے والے ایک ایک ادا پہچانتے ہیں۔ اگر نہیں پہچانتے تو پھر وہاں محبت کی موجودگی مشکوک ہے۔

  8. میں تو زبان سے کہنے کا قائل ہی نہیں ہوں سرے سے ۔۔
    خاص طور پر جہاں پہ کسی پہ ناراضگی ، غصے کا اظہار کرنا ہو۔۔
    ایسے معاملات میں اگر الفاظ بار بار کہے جائیں تو الفاظ اپنا وزن کھو دیتے ہیں
    اور ساتھ انسان بھی دوسرے کے سامنے بے وقعت ہو جاتا ہے۔
    اور ویسے بھی جو آپکے انداز اور اطوار سے آپ کی بات نہ سمجھے اس پہ اپنے الفاظ ضائع کرنا محض بے وقوفی کے سوا کچھ بھی نہیں

    جہاں تک محبت کی بات ہے تو محبت تو ہوتی ہی تب تک ہے جب تک محبوب و محبوبہ ایک دوسرے کو جانتے نہیں ، جیسے ہی جان لیتے ہیں محبت رخصت ہو جاتی ہے۔ ویسے بھی محبت اندھی ہوتی ہے اندھوں کو اشارے کیا خاک نظر آئیں گے۔

  9. اشاروں ہی اشاروں میں ایک اچھی پوسٹ پوسٹ کر دی ہے😛

  10. hijabeshab Said:

    جعفر ، وہ اشارہ بھی تو لکھنا تھا ناں جس سے بندہ تپ جاتا ہے ۔۔ کام آجاتا ۔۔

    عمران اپنے خالی دماغ سے تلاش کرتی ہوں یہی سب ملتا ہے 😛

    جاہل سنکی ، آپ کو میری پوسٹ سمجھ نہیں 😛 جبکہ آپ کی ہر پوسٹ کے لیئے میرا بھی یہی کہنا ہے کبھی تو آسان لکھا کریں 😳

    ڈاکٹر جواد ، نئی روشنی اسکول تو اب بند ہوچکے 🙂

    بلاگ پر خوش آمدید محمد صابر ، اور ٹھیک لکھا آپ نے ۔۔۔

    یاسر ، اس کا مطلب قصور آپ کا ہوا ، میں نے تو ٹھیک اشارے لکھے ہیں 😛

    دوست ، بلکل ٹھیک لکھا ۔۔ باڈی لینگویج ایک فن ہے جو ہر کسی کو نہیں آتا ۔۔

    بلا امتیاز ، غصّے کے بارے میں آپ نے جو لکھا وہ بلکل ٹھیک ، ناراضگی اگر بتائی جائے تو فائدہ ۔۔۔

    عادل اچھا تعریفی اشارہ ہے آپکا 🙂

    • Jafar Said:

      خاتون، وہ اشارہ میں کروں تو لوگ تپتے ہیں
      آپ کے کام نہیں آسکتا
      تھﷺڑے لکھے کو بہت جانیں

  11. بس انداز بیاں یونیق ہونا چاہیئے ۔ جو آپ کا تو ہے ہی اور کسی حد تک ہمارا بھی ہے ۔ ہم تو جی کریئیشن کے آغاز سے پہلے یا ایوولیوشن کے انتہا کے بعد سے ہی ایگری کیا کرتے ہیں ۔ ان بیٹوین تو لڑائی اور مار کٹائی ہی ہوتی ہے جو عقل پکڑنے کیلئے قوائٹ انٹرسٹنگ ہوا کرتی ہے ۔

  12. عثمان Said:

    اشارہ بازی سے پرہیز کریں!
    (ادارہ تحفض حیا بلاگستان)😛

  13. hijabeshab Said:

    جاہل سنکی ، آپ نے اپنی تعریف خود کردی واہ 😛

    عثمان ، تحفض ایسے نہیں ایسے لکھتے ہیں تحفظ 😛

  14. تو آپ آخر کامیاب ہو گئیں یہ ثابت کرنے میں کہ ہم اگر جیلس نہیں تو ایروگنٹ ضرور ہیں ۔
    ویسے ہماری کوشش رہا کرتی ہے کہ جیلس اور ایروگنٹ بیہیوئیر سے بچے رہا کریں پر اس دفعہ مار کھا گئے ۔ باوجود پوری کوشش کے غلطی ہو ہی جایا کرتی ہے ۔
    ایروگنٹ لوگ دوسروں کی خوشیوں میں آگ لگا دیا کرتے ہیں اور یہ بہت ہی افسوناک بات ہوا کرتی ہے جی ۔ معاف کر دیجئیگا ۔

  15. Shabih Fatima Pakistani Said:

    Main isharay buhat achi trha samajh leti hun,….haan kisi aur ko smjha nahi sakti :S

    Wesy mujhy APni ammi ke ishary buhat ACHI trha samjh aaty hain..khaas taur per jo Mehmanon ke saamny hoty hain😀

    matlab keh sakty hain main graduate hun isharay bazi mein:D

  16. hijabeshab Said:

    شبیہہ اشارے سمجھا نہیں سکتی یعنی پوری گریجویٹ نہیں ہو ۔۔ 4 پرچے رہ گئے ہیں جلدی کلیئر کرو 😛


{ RSS feed for comments on this post} · { TrackBack URI }

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: