قصور کس کا ؟؟

عام زندگی ہو یا ٹی وی ڈرامے اکثر یہ جملہ بیٹوں کی مائیں کہتی سنائی دیتی ہیں ۔۔ شکل دیکھو کتنی معصوم لگتی ہے مگر ہے نہیں ۔۔ میرے بیٹے کو اپنے سحر میں جکڑ لیا ۔۔ پھنس گیا میرا بیٹا جادوگرنی کے جال میں ۔۔ ماؤں کے ہاتھوں سے نکلا بیٹا اُن کو یہ سوچنے نہیں دیتا کہ الزام لگانے سے پہلے تفتیش ہی کر لیں کہ کھیل شروع کس نے کیا تھا ۔۔
ہمارے ایک جاننے والوں کے ہاں بھی یہی حال ہوا جب لڑکے نے اپنی پسند کی لڑکی سے شادی کا کہا تو ۔۔ لڑکی کو کوسنے دینے شروع ۔۔۔ جب کے خود کو ہیرو سمجھ کے لڑکی پر لفظوں کے جال لڑکے نے پھینکنا شروع کیئے ہوتے ہیں ۔۔ جب سے تم کو دیکھا ہے جدھر دیکھوں تم ہی تم ہو کچھ اور نظر ہی نہیں آتا ۔۔۔ مجھ پر بھروسہ تو کرو ستاروں کی دنیا میں چاند کے پار لے جاؤں گا ۔۔ کبھی شام کا ایک پہر اور شام ادھار مانگی جا رہی ہوتی ہے ۔۔۔۔ یہاں تک کہ جب دال گلتی نظر نہ آرہی ہو تو دھمکی بھی دے دی جاتی ہے کچھ کھا کے مر جاؤں گا ۔۔ مگر مرتا ورتا کوئی نہیں ۔۔۔۔ اتنے سارے ثبوت کے بعد تو لڑکی کی امّاں کو چاہیئے کہ لڑکے کو کوسنے دیں مگر ۔۔۔ الٹا چور کوتوال کو ڈانٹے والا حساب چل رہا ہوتا ہے ۔۔
لڑکی اگر لڑکے کی طرف مائل بہ کرم ہو تو بھی پہل کم کرتی ہے ۔۔ زیادہ تر لڑکیاں صنفِ مخالف کی طرف سے اظہار کی منتظر رہتی ہیں ۔۔۔ کچھ لڑکیاں جن کا دل سیدھے سادے لڑکوں پہ آجائے جو خود کچھ بول کے نہیں دیتے تو ان کے ساتھ دھونس اور زبردستی کرکے لڑکیاں بھی لڑکوں کو خراب کر دیتی ہیں ۔۔ گاؤں کی مٹیار بولڈ ہوتی ہیں اس معاملے میں ۔۔۔ شہری لڑکیاں اپنی باتوں اور انداز سے تو یہ ظاہر کرتی ہیں کہ ہم تمہارے ہیں صنم ۔۔ مگر اظہار کے معاملے میں ڈھیٹ بنی رہتی ہیں ، یہاں تک کے سوتے میں بھی چہرے کو آنچل سے چھپا کے رکھتی ہیں کہ نیند میں آئی ہوئی مسکراہٹ اور پلکوں کی لرزش کسی کو دل کا راز نہ بتادے ۔۔۔۔ لڑکیاں شدّت سے چاہے جانے کی خواہش رکھتی ہیں اور لڑکے اسی بات کا فائدہ اٹھاتے ہوئے ان کو حسین لفظوں کے جال میں قید کرتے ہیں ۔۔۔ قصور سارا لڑکوں کا ہوتا ہے اور موردِ الزام ٹھہرتی ہیں لڑکیاں ۔۔۔ ظاہر ہے ظالم لوگ معصوموں پر ظلم کرکے ہی خوش ہوتے ہیں 🙄

Advertisements

14 تبصرے »

  1. گاؤں کی مٹیار بولڈ ہوتی ہیں اس معاملے میں ….

    جملہ اوپر سے گزر گیا ہے۔ پکڑا نہیں جاسکا۔ اس بارے مزید تفضیلات بیان کی جائیں۔

  2. hijabeshab Said:

    اظہار کے معاملے میں …

  3. ساری کارروائی لڑکوں پر مت ڈالیں، انٹرنیٹ موبائل کے زمانے میں لڑکیاں بھی بہت دودھ کی دھلی نہیں ہیں۔
    گائوں کی مٹیاریں بولڈ ہوتی ہیں، بس جی عقل نہیں تے موجاں ای موجاں۔۔۔
    ایک منٹ بھئی میں یہ نہیں کہہ رہا کہ سب مٹیاروں کی اوپر والی منزلیں خالی ہوتی ہیں، بلاشبہ سیانی مٹیاریں بھی ہوتی ہیں۔۔۔ بس۔۔۔ اللہ میاں کی فیکٹری میں انکی پروڈکشن آجکل کافی کم ہے۔۔۔
    مرنے والے مرتے بھی ہیں، میرا اپنا کزن مر گیا تھا۔ اسکے گھر والوں کو بھی یہی غلط فہمی تھی کہ یہ سب باتیں ہوتی ہیں اور مرتا ورتا کوئی نہیں۔
    پہلے بات کرنے والا قدرت کا نظام ہے، حیا عورت کی فطرت ہے اور پہلا قدم اٹھانا مرد کی تو جناب اس وجہ سے کوئی مردوں پر سارا مدا نہیں ڈال سکتا۔ اس لئے، ذرا دھیان نال۔۔۔ ایویں ای کوئی سو کر دے گا۔۔۔ ہا ہا

  4. Saad Said:

    گاؤں کی مٹیار بولڈ نہیں ہوتی۔ یہ آپ کو غلط فہمی ہوئی ہے۔ زندگی میں آپ نے کبھی گاؤں دیکھا ہے ویسے؟

  5. شہری لڑکیاں اپنی باتوں اور انداز سے تو یہ ظاہر کرتی ہیں کہ ہم تمہارے ہیں صنم ۔۔ مگر اظہار کے معاملے میں ڈھیٹ بنی رہتی ہیں…

    زبردست مشاہدہ ہے جناب

  6. عثمان Said:

    گاؤں کی مٹیار والا فقرہ ہٹا دیں۔ نہیں تو غیرت کے ان ٹھیکیداروں کو بڑے سخت مروڑ اٹھنے ہیں۔ آپ تو ویسے بھی غیر دیہاتی پس منظر والی کراچی کی شہری بی بی ہیں۔ اور اس معاملے میں "پیدائشی گناہ گار” ہیں۔
    باقی یہ پوسٹ خوب ہے۔ میں اظہار سے ہچکچاتا تو نہیں۔۔۔۔ لیکن جہاں جگہ جگہ بھانت بھانت کے یہ ٹھیکیدار غیرت کے گنڈاسے لے کر پھر رہے ہوں وہاں خاموشی ہی مناسب ہوتی ہے۔ 😦

  7. "اظہار نہيں کرتيں” کی بجائے "برملا کہتی نہيں ہيں” استمال کرتيں تو بہتر تھا ۔ اظہار کے کچھ اور معنی بھی نکل آتے ہيں

    "گاؤں کی مٹيار” کو آپ نے کس سلسلہ ميں بہادر کہا ہے سمجھ مں نہيں آيا ۔ جس سلسلہ ميں آپ بات کر رہی ہيں وہ گاؤں ہو ي شہر ايک ہی ہے
    چاہنا مگر براہِ راست اقرار نہ کرنا لڑکی يا عورت کی فطرت ہے جو کہ فرنگی دنيا ميں عورت کھو چکی ہے

    اتفاق سے ميں نے شادی کے سلسلہ ميں دوسرا رُخ زندگی بھر کے تجربہ کی بنياد پر لکھا ہوا تھا جو آج ہی شائع کيا ہے ۔ مگر سب مائيں ايک جيسی نہيں ہوی ۔

  8. عثمان Said:

    ” . . . گاؤں کی مٹیار بولڈ ہوتی ہیں اس معاملے میں ۔۔۔ شہری لڑکیاں اپنی باتوں اور انداز سے تو یہ ظاہر کرتی ہیں کہ ہم تمہارے ہیں صنم ۔۔ مگر اظہار کے معاملے میں ڈھیٹ بنی رہتی ہیں ، یہاں تک کے سوتے میں بھی چہرے کو آنچل سے چھپا کے رکھتی ہیں کہ نیند میں آئی ہوئی مسکراہٹ اور پلکوں کی لرزش کسی کو دل کا راز نہ بتادے . . . ”

    😛

  9. یہ بچی بہت شریر ہے۔ 🙂

    ویسے بٹیا رانی کبھی کبھار قصور دونوں میں کسی کا نہیں ہوتا۔ 🙂

  10. hijabeshab Said:

    نعیم ، میں نے لڑکیوں کے لیئے بھی لکھا ہے ۔۔ اور بہت ہلکا رکھا ہے ہاتھ لکھتے ہوئے صرف اس لیئے کہ فساد نہ ہو ۔۔ رہی بات سو کرنے کی تو شوق سے جناب ۔۔ ہزار طریقے نکل آئیں گے بچاؤ کے 🙂

    سعد ، گاؤں دیکھا نہیں ۔۔۔ مگر گاؤں کی مٹیار سے قصّے ضرور سنے ہیں ،اب اگر کسی کو ایسی مٹیار نہیں ملی تو اس کی قسمت ۔۔۔ آپ کا اپنا خیال میرا اپنا ۔۔

    احمد عرفان شفقت ۔۔ مشاہدہ 😛 میں بھی تو شہری ہوں 😳

    عثمان ، پوسٹ آپ کو خوب لگی شکریہ ۔۔ رہی بات گاؤں والا فقرہ ہٹانے کی تو جو میرا خیال ہے وہ لکھا ہے ضروری نہیں سب مجھ سے اتفاق کریں ۔۔۔ اپنی اپنی رائے دینے کا سب کو حق ہے ۔۔

    اجمل انکل گاؤں کی مٹیار کا لکھا ہے ناں کہ اظہارِ محبت میں پہل کرنے سے یا اگر کوئی پسند ہو تو شادی کا کہہ دینے کے معاملے میں بہادر ہوتی ہیں ۔۔۔

    سعود بھیّا پھر کس کا قصور ہوتا ہے نینوں کا 😛

  11. kainat Said:

    بہت اچھی عکاسی کی ہے حجاب سس آپ نے،

  12. hijabeshab Said:

    شکریہ کائنات ۔۔

  13. جعفر Said:

    وہ جی ایسی خواتین جن کو طعنے ملتے ہیں، اپنی خوشدامنوں سے کہ میرے بیٹے پر جادو وادو کردیا ہے
    جب خود ان کے بیٹے اس عمر تک پہنچتے ہیں
    تو وہ بھی یہی باتیں کرتی ہیں
    توجی یہ چکر چلتا رہتا ہے
    قصور وغیرہ کسی کا نہیں ہوتا
    بس شامت آئی اور عقل پر پردہ وہ بھی ٹاٹ کا پڑگیا ہو تو بندہ کیا کرسکتا ہے۔۔ ہیں جی۔۔

  14. hijabeshab Said:

    جعفر یعنی دنیا گول تو تھی باتیں بھی گول گھوم کر واپسی کا سفر کرتی ہیں بہت اچھے 🙂


{ RSS feed for comments on this post} · { TrackBack URI }

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: