ہم سب جھوٹے ہیں ؟؟؟

جان بوجھ کر ہم سب دن بھر میں کتنے ہی جھوٹ بول جاتے ہیں ، جب کہ دل کہہ رہا ہوتا ہے کہ یہ جھوٹ ہے مگر سچ بولنے سے گریز کرنا پڑتا ہے اُس وقت جب کسی بہت ہی پیاری دوست نے عجیب سا میک اپ کیا ہو یا اُس کا ڈریس اُس پر سوٹ نہ کر رہا ہو پھر بھی کہنا پڑتا ہے واہ کتنی پیاری لگ رہی ہو ، کبھی کسی دوست نے کوئی تحفہ دیا ہو بھلے وہ آپ کو اچھا نہ لگے مگر دل رکھنے کی خاطر کہنا پڑتا ہے کہ بہت اچھا تحفہ ہے ، اور بعض دفعہ کچھ لوگ حقیقت پسندی کا مظاہرہ کرتے ہوئے اپنے بارے میں سچ بولتے ہیں کہ — میں بالکل اچھا / اچھی نہیں ، میرا وزن زیادہ ہے یا رنگ کالا ہے لوگ مجھے پسند نہیں کرتے لیکن ہم اُن کی ہمت بڑھانے کے لیئے جھوٹ بولتے ہیں کہ نہیں تم تو اسمارٹ ہو بہت پُرکشش ہو اور سُننے والا بیچارہ یہ سوچنے پر مجبور ہو جاتا ہے کہ اُس کا دوست جھوٹ بول رہا ہے یا آئینہ —
پہلے زمانے میں بچّوں سے جھوٹ بولنا آسان تھا کہ جب کوئی بات بچّے نہیں مانتے یا جلدی سونے سے انکار کرتے تو جن یا بھوت آ جائے گا کہہ کر ڈرانے کی کوشش کی جاتی اور بے چارے معصوم بچّے تکیئے میں منہ چھپا کر جو سوتے تو صبح ہی آنکھ کھولتے — مگر آج کل کے بچّے اگر رات دیر تک کوئی کتاب پڑھ رہے ہوں یا کمپیوٹر پر کوئی گیم کھیل رہے ہوں اور اُن کو جلد سونے کے لیئے کہا جائے تو وہ اچھا بس تھوڑی دیر اور کہہ کر پھر اپنے کام میں مصروف ہو جاتے ہیں اور ہم اُن کو بھوت یا چڑیل کا کہہ کر ڈرا بھی نہیں سکتے اس لیئے کہ آج کل کے بچّے کتاب رکھ کر کمپیوٹر آف کر کے واقعی بھوت کا انتظار شروع کر دیں گے کہ اب آ جائے تو دیکھ کر ہی سوئیں گے😛 اور ایسی کوئی مخلوق ہمارے کہنے سے ڈرانے کے لیئے تو آ نہیں سکتی اس لیئے آج کل بچّوں سے جھوٹ سوچ سمجھ کر بولنا پڑتا ہے کہ کہیں جھوٹ جان کو نہ آجائے😛
ویسے سچّی بات تو یہ ہے کہ ہم سب کبھی کسی کی توجہ حاصل کرنے کے لیئے تو کبھی کسی فائدے کے لیئے دل کھول کر جھوٹ بولتے ہیں جھوٹی تعریف کرتے ہیں تا کہ دوسرا ہم کو کسی بھی طرح نظر انداز نہ کرے ہمیشہ ہم سے محبت کرتا رہے ہم پر مہربان رہے ، اور ہم ہر بار جھوٹ بول کر یہ سوچ کے مطمئن رہتے ہیں کہ اس سے کسی کا نقصان تو نہیں ہوا مگر کیا یہ دوسرے کو دھوکہ دینا نہیں ہوتا ؟؟
مگر سوچنے کی بات یہ بھی ہے کہ اگر ہم واقعی سچ بولنے لگیں جیسے اپنے دوست کی سچّی تعریف یا جو شخص جیسا ہے اُس کو ویسا ہی کہا جائے جھوٹ بول کر مبالغہ آرائی نہ کی جائے تو کیا کوئی ہمارا دوست رہے گا ؟؟ کبھی نہیں — دوست اور خیر خواہ کوئی کھونا نہیں چاہتا اور سچ کوئی سُننا نہیں چاہتا اس لیئے جھوٹ بولنا ہم سب کی عادت بن چکی ہے کیا کیا جائے مجبوری ہے🙄
میں نے ایک محترمہ سے سچ بولا تھا وہ آج تک مجھ سے ناراض ناراض سی ہیں😦 مگر بات% 100 ٹھیک کہی تھی میں نے اُن کو تو قصور کس کا ہوا😕

16 تبصرے »

  1. عثمان Said:

    آپ نے کن محترمہ سے کیا سچ بولا تھا۔ محترمہ یا سچ کم از کم کسی ایک کی تفصیل ضرور بتائیے ورنہ پوسٹ ادھوری ہے۔

  2. میں عموما شب کو سوچتا ھوں ۔۔۔۔۔۔۔کہیں غلطی سے آج زبان سچ تو نہیں نکل گیا!!

  3. Md Said:

    میرے خیال میں میک اپ کے معنی ہی حقیقت کو چھُپانا ہے اچھا میک اپ بُرا میک اپ ثانوی بات ہے – رہی جھو ٹ کی بات تو یہ پوری دُنیا کا سب سے بڑا مسئلہ ہے کہ سچ کیا ھے ؟ شُکریہ

  4. hijabeshab Said:

    عثمان ، اُن محترمہ کا ذکر پوسٹ کے آخر میں تو بس یونہی کر دیا ۔۔ ورنہ تو اکثر لوگ مجھ سے ناراض نظر آتے ہیں صرف سچ بولنے کی وجہ سے😦 وہ محترمہ میری رشتہ دار ہیں ہم ایک تقریب میں ساتھ بیٹھے تھے بات ہو رہی تھی ادھر اُدھر کی، مگر میرا حال بُرا تھا سانس لینا مشکل ہو رہا تھا میں جب بھی کسی سے ملنے کے بہانے وہاں سے اُٹھنا چاہتی وہ محترمہ کہتیں واپس یہیں آنا میں بور ہو جاؤں گی ۔۔ جیسے تیسے کر کے تقریب ختم ہوئی ، میں کافی دیر برداشت کر چکی تھی مگر عادت کے مطابق رہ نہ سکی اور کہہ دیا کہ پلیز کسی تقریب میں آنے سے پہلے ماؤتھ واش ضرور استعمال کیا کرو ۔۔ بس جی اُس دن کے بعد سے وہ ناراض ہیں 🙄
    محترمہ کا ذکر اور ساتھ وجہ بھی بتا دی اب پوسٹ مکمل ہوگئی ؟؟؟؟؟؟؟

    • عثمان Said:

      او خدایا!
      آپ کو یہ بات اسطرح نہیں‌کہنا چاہییے تھی۔ سچ اپنی جگہ۔ ۔ ۔ لیکن شائستگی اپنی جگہ ہے۔ کسی اور طرح سے گھما پھرا کر نرم الفاظ میں‌ کہہ دیا ہوتا۔

      اور ہاں۔ ۔ ۔ آپ کے بلاگ کی موجودہ تھیم میں‌ رائے لکھنا مشکل ہے۔ ورڈ پریس ڈاٹ کام میں یہی‌ مسئلہ ہے۔ مجھے بھی کئی تھیمز تبدیل کرنا پڑیں۔ اب جا کر ایک بور سی تھیم لگائی ہے۔ جس سےآراء صحیح لکھے اور پڑھے جاتے ہیں۔

    • ہاہاہا ۔ ایسا سچ نہ ہی بولیں تو اچھا ہے ۔

  5. عثمان Said:

    اور ہاں۔ ۔ ۔ آپ کی تحریر کا موجودہ فونٹ بھی کچھ دھندلا رہا ہے۔ اس کا بھی کچھ کریں۔

  6. hijabeshab Said:

    یہی کہنا سب سے بہتر لگا تھا مجھے 😳 یہ تھیم تو ٹھیک ہے ناں اسی پر واپس آگئی ہوں ۔

    • عثمان Said:

      یہ تھیم ٹھیک ہے۔ کم از کم کمنٹس تو لکھے جارہے ہیں۔ لیکن وہ اُپ کا تعارفی صفحہ تو غائب ہی ہوگیا۔

      مجھے بھی تھیم چننے میں بہت پرابلم ہے۔ سوچ رہا ہوں کہ اپنی ڈومین لے لوں۔

  7. Jafar Said:

    وہ جی ایک بات سنی تھی سیانوں سے۔۔۔
    کہ ایک بندہ کہتا ہے کہ ٓپ کے والد محترم تشریف لائے تھے
    اور دوسرا کہتا ہے کہ تیری ماں دا گھصم ٓیا سی۔۔۔
    انداز بیاں بات بدل دیتا ہے
    باتیں دونوں ہی سچی ہیں جی۔۔۔ بس وہی انداز بیاں۔۔۔

  8. hijabeshab Said:

    ٹھیک کہا جعفر آپ نے ..

    عثمان ، تعارف کا صفحہ مجھے بھی نظر نہیں آ رہا مگر ڈیش بورڈ پر نظر آ رہا ہے ، آپ کو میرا تعارف پڑھنا ہے یہ لیں منظرنامہ پر انٹرویو اور اردو محفل پر انٹرویو پڑھ لیں ۔۔

    http://www.manzarnamah.com/2008/08/shab-interview/

    http://www.urduweb.org/mehfil/showthread.php?5237-انٹرویو-وِد-حجاب

    • عثمان Said:

      آپ کے انٹرویوز پڑھ کر میں تھوڑا تھوڑا ڈر گیا ہوں۔
      انٹرویو کے مطابق آپ کھانے پکانے کے ساتھ ساتھ چہرہ شناسی کی بھی ماہر ہیں۔ اور اوپر سے وکیل۔ کچھ خطرناک کمبینیشن معلوم ہوتا ہے۔ میرے جیسے مسکین کو تو پھونک پھونک کر آپ کے بلاگ پر کمنٹ کرنا چاہیے۔
      اور ہاں۔۔۔۔انٹرویوز سے معلوم ہوتا ہے کہ اس بلاگستان میں آپ اپنی کچھ دوستوں‌کے ہمراہ ہیں۔ لیکن لگتا ہے کہ وہ بلاگنگ سے بیزار ہو کر کب کی جا چکی ہیں۔ یہ جان کر کچھ افسوس ہوا۔

  9. hijabeshab Said:

    عثمان ، ڈر اور مجھ سے 😦 آپ بلا خوف و خطر تبصرہ کریں تنقید کریں ، میں کچھ نہیں کہتی فکر ناٹ ۔۔ اور میری فرینڈز بلاگنگ سے اُکتا کے تو نہیں گئیں بس ذرا گھر داری میں مصروف ہیں 🙂

    • عثمان Said:

      دیسی گرل کو میں نے ایک دفعہ ہی ایک چھوٹی سی ای میل لکھنے کی کوشش کی تھی۔ اس کے بعد جو درگت بنی تو دوبارہ ہمت نہ پڑی۔😦
      لیکن یہ فیضو گلابو خطوط پڑھ کر مجھے تھوڑا حوصلہ ملا ہے۔ اور کافی راہنمائی بھی۔ 🙂

  10. Bdtmz Said:

    That wasn’t rude I can’t stand a few stinking mouths either


{ RSS feed for comments on this post} · { TrackBack URI }

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: